میں اور میری بیگم اکٹھے رہتے ہیں لیکن پچھلے چار سال میں نے اسے ہاتھ بھی نہیں لگایا کیونکہ وہ

بھارت میں ایک شخص گزشتہ 4سال سے اپنی بیوی کے ساتھ رہتے ہوئے بھی اس سے الگ رہ رہا ہے اور اس کی وجہ ایسی مضحکہ خیز ہے کہ آپ بھی ہنسے بغیر نہ رہ سکیں گے۔ ٹائمز آف انڈیا کی رپورٹ کے مطابق اس نامعلوم شخص نے مسائل کا حل بتانے والے ماہر ’زنکھانا جوشی‘ کو لکھا ہے کہ ”میری شادی 2003ءمیں ہوئی تھی لیکن میں شروع سے ہی سمجھتا ہوں کہ مجھ میں اور میری بیوی میں ہم آہنگی نہیں ہے۔ وہ کئی مذہبی گروﺅں کو مانتی ہے لیکن میں ان گروﺅں پر یقین نہیں رکھتا۔ اگرچہ میں نے کبھی اسے اس کام سے منع نہیں کیا لیکن میں اکثر اسے کہتا رہا ہوں کہ وہ گروﺅں کی ماننے کی بجائے ’خدا‘ کی عبادت کرے۔ لیکن وہ باز نہیں آئی۔“۔جاری ہے ۔


اس شخص نے مزید لکھا ہے کہ ”میں نے 2013ءکے بعد سے اب تک اپنی بیوی کے ساتھ ازدواجی تعلق قائم نہیں کیا کیونکہ وہ کہتی ہے کہ گروﺅں کی تعلیمات کے مطابق یہ میاں بیوی کاجنسی تعلق استوار کرنا ناخالص کام ہے۔ میری بیوی کے اس روئیے اور سوچ کی وجہ سے ہم ایک ساتھ رہتے ہوئے بھی الگ الگ رہ رہے ہیں ۔جاری ہے ۔

......
loading...

جس سے ہمارے بچوں کی زندگیاں شدید متاثر ہو رہی ہیں۔“جوشی نے اس شخص کو مسئلے کا حل بتاتے ہوئے لکھا ہے کہ ”ہر میاں بیوی میں کسی نہ کسی حد تک اختلاف رائے یا غیرہم آہنگی ہوتی ہے، اس غیرہم آہنگی کو ختم کرنے کے کوشش کرنی چاہیے، نہ کہ تعلق ہی ختم کر لیا جائے۔ آپ پابندی کے ساتھ روزانہ ایک گھنٹہ ایک ساتھ گزاریں اور کوشش کریں کہ یہ ایک گھنٹہ قہقہوں اور خوشی سے بھرپور ہو۔ باہم طنزومزاح ایک ایسی چیز ہے جو لوگوں کو ایک دوسرے کے قریب لاتا ہے۔ اپنی بیوی کے متعلق مثبت سوچیے اور اس غیرہم آہنگی کو ختم کرنے کی کوشش کیجیے۔ جلد اسے بھی اس بات کا احساس ہو جائے گا۔“