’ اس دن رشتے کیلئے لڑکے والوں کا میری امی کو فون آیا، پہلے اُن خاتون نے میری عمر اور تعلیم کے بارے میں پوچھا پھر کہنے لگیں۔۔۔ ‘ نوجوان پاکستانی لڑکی نے ا یسی تلخ بات بتا دی کہ جان کر آپ کا بھی دل افسردہ ہو جائے

دین اسلام کے ماننے والوں کو تو حکم دیا گیا ہے کہ وہ موزوں رشتے کا انتخاب کرتے ہوئے عفت و پاکیزگی اور سیرت و کردار جیسی خوبیوں کو اولین ترجیح دیں لیکن بدقسمتی سے ہماری ترجیحات دین کے روشن اصولوں سے کوسوں دور جا چکی ہیں۔ ہمارے معاشرے میں جب مائیں بیٹوں کا رشتہ ڈھونڈنے نکلتی ہیں تو کیسی کیسی عجیب و غریب وجوہات کی بناءپر اچھی بھلی لڑکیوں کو ٹھکرا دیتی ہیں ، اس کا اندازہ ویب سائٹ parhlo پر بیان کئے گئے ایک واقعے سے بخوبی ہو سکتا ہے۔جس لڑکی کے ساتھ یہ افسوسناک واقعہ پیش آیا وہ بتاتی ہیں ”میری والدہ کو ایک لڑکے کی والدہ کا فون آیا۔۔جاری ہے ۔

اس خاتون نے میری عمر ، تعلیمی پس منظر اور پیش ورانہ زندگی کے بارے میں معلومات لیں۔ یہ سب باتیں پوچھنے کے بعد وہ کہنے لگیں ’ کیا آپ کی بیٹی کا رنگ بہت گورا ہے؟ ‘ خاتون کا کہنا تھا کہ انہیں یہ سوال پوچھنا اچھا نہیں لگا لیکن چونکہ ان کے بیٹے کا رنگ بہت گورا ہے اس لیے یہ پوچھنا پڑا۔ میں آپ کو سچ بتاﺅں تو میرا رنگ قدرے گندمی ہے۔ میری والدہ نے بھی اس خاتون کو یہی جواب دیا کہ میری بیٹی نہ ہی بہت گوری ہے اور نہ ہی کالی۔ میری والدہ کے اس جواب کے چند سیکنڈ بعد ہی دوسری جانب سے کال بند کر دی گئی۔ ۔جاری ہے ۔

......
loading...


اس بات پر میں بہت دکھی ہوئی، لیکن ہفتہ بھر پریشانی میں مبتلا رہنے کے بعد بالآخر مجھے احساس ہوا کہ مسئلہ میرے اندر نہیں بلکہ ہمارے معاشرے اور اس کی سوچ میں ہے۔ ہم کہنے کو تو آزاد ہیں لیکن در حقیقت ہم اپنی سوچوں اور وسوسوں کے غلام ہیں۔ ہم یہ کہتے ضرور ہیں کہ اصل خوبصورتی شکل و صورت میں نہیں ہوتی لیکن کیا ہم واقعی اس بات پر یقین بھی رکھتے ہیں ؟ میں یہ سوال ان سب لوگوں سے کرتی ہوں جو ظاہری شکل و صورت کی بناءپر کسی لڑکی کو رد کر کے چلے جاتے ہیں۔ کیا گوری رنگت کا مطلب ایک طویل اور صحت مند زندگی ہے ؟ کیا یہ اس بات کا ثبوت ہے کہ اس لڑکی سے آپ کو اولاد بھی حاصل ہو گی؟ ۔جاری ہے ۔

کیا گوری رنگت وفا کی ضمانت بھی ہے ؟ کیا لڑکی کی گوری رنگت آپ کی قسمت بد ل دے گی ؟ اگر ایسا نہیں ہے تو پھر ہمارے ہاں ایسی سوچ کیوں پائی جاتی ہے ؟ میں گوری رنگت والوں پر انگلی نہیں اٹھا رہی، میں تو بس یہ کہنا چاہتی ہوں کہ زیادہ اہم بات یہ ہے کہ آپ کیسے انسان ہیں۔ کاش ہم سب لوگ اس بات کو سمجھ سکیں اور اپنی سوچ بدلنے کی کوشش کریں۔“

مزید بہترین آرٹیکل پڑھنے کے لئے نیچے سکرول کریں ۔↓↓↓۔