عشق انسان کو کس حد تک لے جاتا ہے دورحاضر کی ایسی سچی کہانی جو ہیررانجھااور لیلی مجنوں جیسی داستانوں کو پیچھے چھوڑ گئی

اس کا نام جعفر ہے، یہ1977 میں پیدا ہوا ، معیشت کا طالب علم تھا ، ایک لڑکی مریم سے ملاقات ہوئی. اس نے اس سے محبت کی اور محبت بھی ایسی جو عقیدت پاکیزگی اوراحترام .تک محدود تھی زندگی میں یہ دونوں کھبی بھی حقیقت میں نہیں ملے . 2001 میں اپنی تعلیم سے فارغ ہونے تک تعلقات کو 5 سال بیت چکے تھے ، اورایک دن جعفر نے مریم کے باپ سے مریم کا ہاتھ مانگا جسے مریم کے باپ نے غربت اور ذات پات کو وجہ عناد بناتے ہو سختی سے انکار جو لاکھ منت سماجت اور بہت سے جتن کے باوجود نہیں مانا۔جاری ہے۔

......
loading...

اور آخر کار ایک روز مریم نے دلبرداشتہ ہوکر خودکشی کرلی مریم کی موت کے کچھ دن بعد ہی جعفر بھی اپنا ذہنی توازن کھوبیٹھا اورآج بھی جعفر مریم کے محلے کی گلیوں خاک چھانتا ہے روتا پکارتا ہے اسے کئی بار گھر واپس لیجانے کی کوشش کی گئ لیکن وہ پھر مریم کے محلہ میں واپس آجاتا ہے خوشی غم سے بیگناہ جسے موسموں کی سختی اور بھوک سے بھی کوئی مطلب نہیں مطلب ہے۔جاری ہے۔

تو مریم کے آبائی محلے سے جہاں وہ آج بھی دربدر پاگلوں کیطرح خاک چھان رہا ہےسوچئے کہ محبت کی انتہا عشق ہے تو عشق کی انتہا کیا ہے؟