اگر خواتین حمل کے دوران یہ ایک قدرتی چیز استعمال کریں تو حمل ضائع ہونے یا بچے کو پیدائشی بیماریاں ہونے کا امکان بے حد کم ہوجاتا ہے ، جدید تحقیق میں سائنسدانوں نے سب سے بڑی دریافت کر لی

دنیا میں سالانہ کتنے اسقاط حمل ہوتے ہیں اور کتنے بچے مختلف قسم کے عارضوں کے ساتھ پیدا ہوتے ہیں۔ اب تک سائنس اس صورتحال سے نمٹنے کے لیے کچھ نہیں کر سکتی تھی تاہم اب آسٹریلیا کے سائنسدانوں نے اس کا علاج دریافت کر لیا ہے اور وہ بھی انتہائی آسان۔ گلف نیوز کی رپورٹ کے مطابق آسٹریلوی سائنسدانوں نے تحقیق میں پتہ چلالیا ہے۔جاری ہے۔

کہ اسقاط حمل اور ماں کے پیٹ میں بچوں کی نشوونما میں بگاڑ کی وجہ ماﺅں میں ایک وٹامن کی کمی ہوتی ہے اور یہ کمی پوری کر دی جائے تو اسقاط حمل اور بچوں کی نشوونما متاثر ہونے کے خطرے سے بچا جا سکتا ہے۔رپورٹ کے مطابق 12سال کی تحقیق کے بعد سائنسدانوں نے نتائج میں بتایا ہے کہ ”یہ وٹامن بی 3ہے جو نیاسین(Niacin)کے نام سے بھی جانا جاتا ہے۔ خواتین میں اس کی کمی اسقاط حمل اور ان کے پیٹ میں بچے کی نشوونما متاثر ہونے کا سبب بنتی ہے۔“ تحقیقاتی ٹیم کی سربراہ سیلی ڈن ووڈی کا کہنا تھا کہ ”اسقاط حمل کو وقوع پذیر ہونے سے روکنا اور ماں کے پیٹ میں بچے کی نشوونما کو بہتر بنانا۔جاری ہے۔

......
loading...

اس سے قبل بہت مشکل خیال کیا جاتا تھا لیکن ہماری تحقیق میں یہ ثابت ہوا ہے کہ یہ عارضے قابل علاج ہیں۔ ان کا علاج عام پائے جائے والے وٹامن بی 3کے ذریعے ممکن ہے۔ اگر یہ خواتین کی خوراک میں شامل کر دیا جائے تو ان مسائل سے بچا جا سکتا ہے۔“

مزید بہترین آرٹیکل پڑھنے کے لئے نیچے سکرول کریں ۔↓↓↓۔