چنیوٹ میں تبلیغ کے دوران تبلیغی جماعت کے رہنمائ نے ایسی بات کہہ دی کہ موقع پر ہی قتل کردیاگیا،

دو سگے بھائیوں نے مسجد میں سوئے ہوئے تبلیغی جماعت کے افراد پر آدھی رات کو کسّی سے حملہ کر دیا۔ ایک بزرگ موقع پرجاں بحق اور دوسرازخمی ہوگیاجسے ہسپتال منتقل کردیاگیا، ایک ملزم آلہ قتل سمیت گرفتار جبکہ دوسرا فرار ہو گیا، مقتول اور ملزم کے درمیان مذہبی عقائد پر اختلاف تھا۔ نعش پوسٹمارٹم کے بعد مقامی ساتھیوں کے سپرد کر دی گئی۔۔جاری ہے ۔


تفصیلات کے مطابق رائیونڈ سے تقریباً نو ماہ قبل تشکیل پا کر70سالہ ولی الرحمان کی زیرقیادت ایک سال کیلئے تبلیغ کیلئے سیالکوٹ سے اپنے سفر کا آغاز کرنے والی کراچی سے تعلق رکھنے والے گیارہ افراد پر مشتمل جماعت نمبری 83 جب رائیونڈ سے ہوتی ہوئی چنیوٹ کے نواحی علاقہ قلعہ آسیاں کی جامع مسجد میں پہنچی تو دو دن گزرنے کے بعدمسجد کے قریبی موجود گھر کے پیر کرم شاہ کے مدرسہ دارالعلوم محمدیہ غوثیہ بھیرہ کے طالبعلم دونوں بھائی اکرام خان اورعمران کے گھر گئے اور انہیں بھی تبلیغ کی۔ولی الرحمان اوراکرام خان اور عمران کے درمیان مذہبی عقائد میں اختلاف پر تلخ کلامی ہوئی ۔۔جاری ہے ۔

......
loading...


تھانہ صدر کے ایس ایچ او محمد افضل کے مطابق تھوڑی سی تلخی ہونے کے بعدتبلیغی جماعت کے افراد چلے گئے اور بعداز نماز عشاءمسجد کے صحن میں سو گئے تو اکرام خان بھائی عمران کے ہمراہ مسجد میں رات گئے داخل ہوا اور کسّی کے پے درپے وار کر کے 70 سالہ ولی الرحمان ولد منیر قوم سواتی سکنہ ملیر کراچی کو ابدی نیند سلا دیا، 57 سالہ عبداللہ سکنہ اورنگی ٹاﺅن کراچی کو شدید زخمی کر دیا جسے تشویشناک حالت کے پیش نظر الائیڈ ہسپتال فیصل آباد منتقل کر دیا گیا۔ملزم اکرام خان کو پولیس نے گرفتار کر کے آلہ قتل برآمد کرلیا، دوسرا ملزم عمران فرار ہو گیا۔ پولیس نے متاثرہ شخص کے داماد محمد رفیق کی مدعیت میں مقدمہ درج کر کے تفتیش شروع کر دی۔۔جاری ہے ۔

نعش پوسٹمارٹم کے بعد مقامی تبلیغی جماعت کے سپرد کر دی گئی۔ مقامی مرکز مسجد نور میں بعداز نماز ظہر نماز جنازہ ادا کی گئی جس میں ہر مکتبہ فکر کے لوگوں نے کثیر تعداد میں شرکت کی ۔ شہید ولی الرحمان کی وصیت کے مطابق اس کی میت کو پیر حافظ دیوان قبرستان میں دفن کر دیا گیا۔

مزید بہترین آرٹیکل پڑھنے کے لئے نیچے سکرول کریں ۔↓↓↓۔