انسانیت ابھی زندہ ہے : پنجاب کے شہر قصور میں اس انسپکٹر نے ایسا کارنامہ سرانجام دے ڈالا کہ پورے ملک میں بلے بلے ہو گئی

موٹروے پولیس کے ایک انسپکٹر نے بہادری کا مظاہرہ کرتے ہوئے خودکشی کے لیے نہر میں چھلانگ لگانے والی لڑکی کو بچا لیا۔پولیس کے مطابق لڑکی نے طلاق ملنے پر دلبرداشتہ ہو کر خودکشی کی کوشش کی۔پولیس کے مطابق قصور کے علاقے پھول نگر کی رہائشی 22 سالہ لڑکی طلاق ملنے پر دلبرداشتہ ہوکر گھر سے نکلی اور لنک جمبر کینال میں چھلانگ لگادی۔.۔جاری ہے

لوگوں نے لڑکی کو چھلانگ لگاتے دیکھ کر شور مچا دیا۔شور سن کر موٹروے پولیس کے پیٹرولنگ آفیسر انسپکٹر زاہد مقصود گاڑی سے اترے اور انہوں نے نہر میں چھلانگ لگادی اور لڑکی کو ڈوبنے سے بچا لیا۔بعدازاں ریسکیو ٹیم نے لڑکی کو مقامی اسپتال منتقل کر دیا، جہاں اس کی حالت خطرے سے باہر بتائی گئی۔جب یہ واقعہ ڈپٹی انسپکٹر جنرل (ڈی آ ئی جی) موٹروے مرزا فاران بیگ کے نوٹس میں آیا تو انھوں نے انسپکٹر زاہد مقصود کو شاباش دی۔ان کا کہنا تھا کہ موٹروے پولیس حقیقی معنوں میں انسانیت کی خدمت پر عمل پیرا ہے۔جبکہ دوسری جانب موٹر وے پولیس نے ایک اور شاندار کارنامہسر انجام دیتے ہوئے گمشدہ بچی کو والدین سے ملا دیا،ذرائع کے مطابق انسپکٹر محمد اقبال استوری اور سب انسپکٹر محمد صدیق جو کہ معمول کی پٹرولنگ ڈیوٹی پر تھے،.۔جاری ہے

......
loading...

اس دوران اظہر آباد نزد ترنول کے علاقہ ٹی روڈ پرایک بچی جس کی عمر تین سال تھی نام فضہ بتاتی تھی،روڈ کے کنارے کھڑی زاروقطار رو رہی تھی،جس پر پٹرولنگ پر مامور افسران نے اسے اپنی حفاظت میں لیا،اور اسکے والدین کی تلاش شروع کردی،بہت تگ و دوڑ کے بعد اسکے والد سرتاج اللہ سے رابطہ ہوا جو کہ سیکٹر ڈی سترا اسلام آباد کا رہائشی تھا، موٹر وے پولیس نے تمام قانونی تقاضے پورے کرتے ہوئے بچی کو اسکے والد کے حوالے کردیا، گمشدہ بچی کے والد نے موٹڑ وے پولیس کی کارکردگی کو سراہا اور دعا کی کہ جس طرح موٹڑ وے پولیس اپنی خدمات سرانجام دے رہی ہے.۔جاری ہے

اسی طرح اگر تمام محکموں کے لوگ اپنے ڈیوٹی سرانجام دیں تو یہ ملک مثالی ملک بن سکتا ہے۔

مزید بہترین آرٹیکل پڑھنے کے لئے نیچے سکرول  کریں۔ ↓↓↓۔