کیا آپ کے بال گرتے ہیں کیا آپ گنجے پن کا شکار ہیں

ہر خاتون کی خواہش ہوتی ہے کہ اس کے بال لمبے ٗ گھنے اور چمکدار ہوں اور وہ ان کے لئے جتن بھی کرتی ہے ٗ کبھی شیمپو تبدیل کرتی ہے کبھی کنڈیشنر ٗ کبھی مختلف تیلوں سے بالوں کا مساج کیا جاتا ہے توکبھی مہندی اور انڈا لگا کر بالوں کو لمبا اور گھنا کرنے کی کوشش کی جاتی ہے ۔۔۔جاری ہے

یہ بھی حقیقت ہے کہ انسانی شخصیت کی زیبائش میں بالوں کا کردار سب سے اہم ہے خاص طو رپر عورت کے بال ہی اس کا حُسن ہوتے ہیں اگرچہ بالوں کی نشوونما کرنے والے ٹانک بالوں کو سنوارتے اور سر کی جلد پر چکناہٹ پیدا کرتے ہیں مگر ان میں ایسی کوئی چیز نہیں ہوتی جو بالوں کی جڑوں میں طاقت پیدا کرکے نئے بال اُگاسکے اور ان میں بڑھوتری کا فریضہ انجام دے سکے نہ ہی کسی شے کی مدد سے بالوں کو گھنا کیا جاسکتا ہے ٗ بالوں کا گھنا پن ان کی رنگت اور ساخت خالصتاًموروثی ہوتی ہے ۔ بالوں کے بڑھنے کی رفتار تقریباً دو ملی میٹر فی ہفتہ ہوتی ہے او ران کے بڑھنے کا دورانیہ دو سے تین سال تک کا ہوتا ہے ۔ ایک عام مفروضہ ہے کہ سر بار بار منڈوانے یا بال ترشوانے سے بال گھنے اور زیادہ تعداد میں نکلتے ہیں ٗ جبکہ اس امر کی ابھی تک کسی بھی طرح سے تصدیق نہیں ہوسکی ۔ بالوں کے روزانہ گرنے کی نارمل تعداد بیس سے لے کر سو تک ہوسکتی ہے ۔ بالوں کی نشوونما کے دو ادوار ہوتے ہیں ایک تو نکلنے کا دور جبکہ دوسرا بالوں کے آرام کاوقفہ یعنی ٹیلی جن فیز جس کے گزرنے کے بعد بال پھر سے اُگتے ہیں ۔سائنسی حقیقت ہے کہ بال کا وہ حصّہ جو جلد کی سطح کے اُوپر ہوتا ہے اپنی ساخت میں مردہ ہے اس کی واضح مثال یہ ہے کہ انہیں کاٹنے سے تکلیف نہیں ہوتی ۔ بالوں کا وہ حصّہ جو جلد کے اندر موجود ہوتا ہے وہ خون کی نالیوں اور اعصاب سے پُر ہوتا ہے۔۔جاری ہے

ٗلہٰذا بالوں کو غذا اسی اندرونی حصّے سے فراہم ہوتی ہے ٗ سر پر مختلف قسم کے تیلوں کی مالش سے دوران خون تیز ہونے سے بالوں کی نشوونما تو بہتر ہوسکتی ہے مگر انہیں اس سے کوئی غذائیت نہیں ملتی ۔ انہیں غذا کی فراہمی تو جلد کے اندر موجود خون کی نالیوں کے ذریعے ہی ہوتی ہے ۔ بال علیحدہ سے کوئی چیز نہیں بلکہ یہ بھی عام صحت ہی کا حصّہ ہیں ۔ اگرجسم صحت مند ہے تو بال بھی صحت مند ہوں گے ۔ بیماری ٗ ڈائٹنگ ٗ کسی خاص دوا کا استعمال ٗ غدودوں کے نظام میں خرابی ٗ جسمانی تناؤ ٗ ذہنی دباؤ اور ناقص یا غیر متوازن غذا کا استعمال بھی بالوں کے مسائل کا باعث بنتا ہے مگر ہمارے ہاں اس بات کا شعور ہی نہیں کہ بالوں کی صحت کے لئے ایسی غذائیں کھائی جائیں جو انہیں مطلوبہ غذائیت فراہم کرکے لمبا ٗ گھنا اور چمکدار بنائیں اس لئے آج ہم آپ کو بالوں کی غذا کے بارے میں بتائیں گے جیسا کہاپنی غذا میں مناسب مقدار میں پروٹین شامل کریں یہ جزو بالوں کی نشوونما ٗ ناخن کی چمک دمک اور عام صحت کے لئے نہایت اہم ہے ۔ پروٹین کی سب سے عمدہ مثالیں مچھلی اور مرغی ہیں ۔اگر ہماری غذا سے ضروری چکنائی خارج ہوجائے تو ان کا اثر فوری طور پر بالوں کی صحت پر پڑتا ہے اور ان کی قدرتی چمک کھوجاتی ہے اگر آپ کے بال خشک اور کھردرے ہیں تو مچھلی کو اپنی غذا کا حصّہ بنائیں جو فیٹی ایسڈز کا بہترین ذریعہ ہے اس کے علاوہ خشک میوہ جات کھائیں یہ بھی آپ کے بالوں کو بھرپور غذائیت فراہم کرتے ہیں ۔اگر آپ نے اپنے بالوں کو مضبوط بنانا ہے تو آئرن کو اپنی غذا کا خاص جزو بنالیں ٗ کیونکہ اس کمی سے بال باریک ہونے لگتے ہیں ۔۔۔جاری ہے

سبزیوں او رپھلوں میں آئرن وافر مقدار میں ہوتا ہے اس لئے مختلف پھلوں اور سبزیوں کو اپنی غذا کا حصّہ بنائیں خصوصاً سیب ٗ کیلا ٗ امردو ٗ گاجر او رپالک کو اپنی روزانہ کی غذا میں شامل کرلیں ۔یہ تمام معدنی نمکیات بالوں کے لئے بیحد اہم ہیں ۔ یہ بالوں کو خشک اور کھردرے ہونے سے بچاتے ہیں اور انہیں مضبوطی فراہم کرتے ہیں ۔ اناج ٗ سبزیاں اور پھل ان کو حاصل کرنے کا بہترین ذریعہ ہیں ۔بالوں کی صحت کے لئے وٹامن Bٗ وٹامن C ٗ وٹامن E اور وٹامن K بیحد اہم ہوتے ہیں ۔ جب خوراک کا 80 فیصد حصّہ تلے ہوئے اور گھی میں بھنے ہوئے پکوانوں اور جنک فوڈ پر مشتمل ہو تو جسم میں وٹامنز کی کمی یقینی ہے ۔ وٹامنز حاصل کرنے کے لئے اناج ٗ میوہ جات ٗ بیجوں ٗ ہرے رنگ کی سبزیوں اور ڈیری مصنوعا ت کو اپنی غذا کا حصّہ بنائیں ۔ پھل وٹامنز کا خزانہ ہیں صرف پھلوں کے رس پر اکتفا نہ کریں بلکہ پھل پھوگ سمیت کھائیں تاکہ آپ کو اور آپ کے بالوں کو پوری غذائیت مل سکے ۔اسی طرح کچھ احتیاط بھی کرنی ضروری ہے ۔ اپنی خوراک میں نمک اور کیفین کی مقدار کم کردیں ۔ فاسٹ فوڈ اور جنک فوڈ سے احتراز کریں ہر روز ایک قسم کا کھانا نہ کھائیں بلکہ بدل بدل کر کھائیں ٗ کیونکہ ایک ہی قسم کی غذا کھاتے رہنے سے بعض اجزاء کی زیادتی اور بعض غذائی اجزاء کی کمی ہونے لگتری ہے۔۔جاری ہے

جس سے فری ریڈیکلز بھی بن سکتے ہیں جو بال گرنے کا اہم سبب ہیں ۔ غذابہتر اور معیاری ہو تو صحت بہتر ہونے لگتی ہے اس لئے مصنوعی اشیاء کا سہارا لینے کے بجائے اپنی غذا کو متوازن کرلیں اور بالوں کو گرنے سے بچاکر لمبا ٗ گھنا اور چمکدار بنالیں ۔

مزید بہترین آرٹیکل پڑھنے کے لئے نیچے سکرول  کریں۔ ↓↓↓۔

اپنا تبصرہ بھیجیں