خنزیروں کی یہ بیماری اب انسانوں کو اپنی لپیٹ میں لینے والی ہے، سائنسدانوں نے ایسا انکشاف کردیا کہ ہر شخص شدید پریشان ہوجائے

مغربی ممالک میں سور کا گوشت عام استعمال ہو رہا ہے جس سے خطرناک بیماریاں جنم لے رہی ہیں اور اب سائنسدانوں نے سوروں کی ایک ایسی خوفناک بیماری انسانوں میں پھیلنے کا خدشہ ظاہر کر دیا ہے کہ سن کر شخص کے پیروں تلے سے زمین نکل جائے۔۔جاری ہے

ڈیلی سٹار کے مطابق امریکہ کی اوہائیو سٹیٹ یونیورسٹی کے سائنسدانوں نے اپنی تحقیق میں بتایا ہے کہ ”سوروں میں پایا جانے والا ’پروسین ڈیلٹاکوروناوائرس‘ (Procine Deltacoronavirus)انسانوں میں پھیل رہا ہے۔ یہ ایسا وائرس ہے جو سوروں سے دیگر انسانوں اور جانوروں میں سرایت کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے اور ان کے خلیوں میں جا کر پرورش پانے لگتا ہے۔ یہ وائرس بھی سارس، مرس(Mers) اور ایبولا جیسی تباہ کن بیماریاں پھیلانے والے وائرس سے مشابہہ اور اتنا ہی خطرناک ہے۔ “۔جاری ہے

تحقیقاتی ٹیم کی رکن پروفیسر لنڈا سیف کا کہنا تھا کہ ”ابتدائی طور پر یہ وائرس چین میں دریافت ہوا تھا۔ اس کے پھیلاﺅ پر ہمیں شدید تحفظات لاحق ہیں۔ یہ جانوروں کو بھی شدید نقصان پہنچانے ہیں اور انتہائی سرعت کے ساتھ انسانوں میں داخل ہونے کی صلاحیت بھی رکھتا ہے۔۔جاری ہے

جس طرح سارس اور مرس جیسے امراض اب تک 1ہزار سے زائد لوگوں کی زندگیاں نگل چکے ہیں، اسی طرح یہ وائرس انسانوں کے لیے ایک نیا خطرہ بن کر سامنے آ رہا ہے، جس کے نقصانات روکنے کے لیے ہمیں ابھی سے اقدامات اٹھانے ہوں گے۔“

مزید بہترین آرٹیکل پڑھنے کے لئے نیچے سکرول کریں ۔↓↓↓۔

کیٹاگری میں : news

اپنا تبصرہ بھیجیں