”اگر 2 لڑکیاں ایک ہی بیڈ پر سوئیں تو۔۔۔“ پاکستان کی معروف یونیورسٹی میں ہوسٹل میں رہنے والی لڑکیوں کیلئے ایسا نوٹیفکیشن جاری کر دیا گیا جس کی تاریخ میں مثال نہیں ملتی، سوشل میڈیا پر ہنگامہ برپا ہو گیا

کستان میں طلباءو طالبات کی بیشتر تعداد کسی دوسرے شہر میں واقع یونیورسٹہوسٹلز میں رہنے والے طلباءو طالبات کے سامنے بہت سی ایسی چیزیں آتی ہیں جو حیران کر دینے کیلئے کافی ہوتی ہیں مگر اسلام آباد کی ایک یونیورسٹی انتظامیہ نے ہوسٹل میں رہنے والی لڑکیوں کے لئے جو نوٹیفکیشن جاری کیا ہے اسے دیکھ کر تو آپ بھی ہکا بکا رہ جائیں گے۔ ۔جاری ہے ۔


انٹرنیشنل اسلامک یونیورسٹی اسلام آباد نے ہوسٹل میں قیام پذیر لڑکیوں کیلئے نوٹیفکیشن جاری کیا جس میں لڑکیوں پر اپنی بہن یا سہیلی کے ایک ہی بیڈ پر سونے پر پابندی عائد کی گئی۔ اس نوٹیفکیشن کے منظرعام پر آتے ہی انٹرنیٹ پر ہنگامہ برپا ہو گیا ہے اور کوئی حیران و پریشان ہے۔یونیورسٹی کی جانب سے 20 اپریل 2017ءکو جاری ہونے والے نوٹیفکیشن میں کہا گیا ہے کہ ”ہوسٹل میں قیام پذیر تمام طالبات کو مطلع کیا جاتا ہے کہ ہوسٹل میں بیڈ شیئرنگ سختی سے منع ہے۔ ۔جاری ہے ۔

اگر کوئی طالبہ اپنی سہیلی یا بہن کیساتھ بیڈ شیئر کرتی، یا ایک ہی کمبل میں دو لڑکیاں اکٹھی بیٹھی دیکھی گئیں تو انہیں بھاری جرمانہ کیا جائے گا۔ ہوسٹل کی رہائشی طالبات کو ہدایت کی جاتی ہے کہ وہ اپنے اپنے بیڈ کے درمیان کم از کم 2 فٹ کا فاصلہ بھی رکھیں۔“ی میں داخلہ لیتی ہے جس کی وجہ سے انہیں اپنے شہر سے دور ہوسٹل میں قیام کرنا پڑتا ہے۔ ہوسٹل میں رہنا جہاں ایک ”ایڈ ونچر“ ہوتا ہے وہیں بہت سے تلخ حقیقتوں کا سامنا بھی کرنا پڑتا ہے۔

کیٹاگری میں : news

اپنا تبصرہ بھیجیں