جب ہم دنئی ائیرپورٹ پہنچے تو چار افراد آئے اور ہمیں پکڑ کر زبردستی فلیٹ پر لے گئے جہاں ہمیں لائن میں کھڑا کر دیا گیا اور پھر ایک مرد آہا اور اس نے عرب ملک میں ایسا شخص قحبہ خانہ چلاتے ہوئے پکڑا گیا کہ کوئی سوچ بھی نہ سکتا تھا شرمناک خبر آگئی

۔27۔سالہ بنگلہ دیشی گارڈ کو دبئی کی عدالت نے انسانی سمگلنگ اور قحبہ خانہ چلانے کے الزام میں تین سال قید کی سزا سنا دی ہے ۔تفصیلات کے مطابق ملزم خواتین کو گھریلو ملازمہ کی نوکری کا جھانسہ دے کر یہاں بلاتا تھا اور اپنے مقاصد کیلئے انہیں جسم فروشی پر مجبور کرتا تھا ،گارڈ پر اپنے فلیٹ کو بطور قحبہ خانہ استعمال کرنے کا بھی الزام عائد کیا گیا ،عدالت کے حکم کے بعد بنگلہ دیشی شخص کے فلیٹ کو سیل کر دیا گیاہے ۔ ۔جاری ہے ۔

عدالت میں انکشاف ہوا کہ گارڈ اپنے ساتھیوں کے ساتھ دبئی ایئرپورٹ سے دو خواتین کو جبل علی میں ٹیکوم نامی بلڈنگ میں لے کر آیا اور انہیں غیر قانونی کاروبار کرنے پر زبردستی راضی کیا ۔عدالت کی جانب سے دو خواتین کو بھی کرغیز ی خواتین کو جسم فروشی کے غیر قانونی کاروبار میں ملوث ہونے پر چھ ماہ قیدکی سزا بھی سنائی ہے جس کے بعد انہیں ان کے ملک بھیج دیا جائے گا ۔ ۔جاری ہے ۔


دبئی کی پولیس کے سامنے یہ سارامعاملہ اس وقت آیا جب ایک جسم فروشی پر زبردستی آمادہ کی جانے والی لڑکیوں میں سے ایک لڑکی نے اپنے آبائی وطن اپنے بھائی کو واٹس ایپ پر میسج بھیجا اور تمام تر صورتحال سے آ گیا ۔پولیس نے جب اطلاع ملنے پر متعلقہ فلیٹ پر پہنچے مارا تو وہاں پر ایک خاتون اور ایک مرد نے دروازہ کھولا جنہوں نے انکشاف کیا کہ وہ کرغیزستان کے قونصل خانے کیلئے کام کرتے ہیں ۔انہوں نے بتایا کہ دوخواتین کچھ دن پہلے دبئی آئی ہیں اور انہیں ان کی مرضی کیخلاف فلیٹ میں قید کر لیا گیا اور انہیں زبرستی جسم فروشی کے کاروبار کیلئے مجبور کیا گیا ۔ ۔جاری ہے ۔


پولیس نے کارروائی کرتے ہوئے فلیٹ پر چھاپا مارا اور وہاں پر تعینات گارڈ کو حراست میں لیا جو کہ استقبالیہ پر ٹیبل کے قریب بیٹھا تھا ،فلیٹ کو دو حصوں میں پردے لگا کر تقسیم کیا گیاتھا جو کہ ممکنہ طور پر جسم فروشی کیلئے استعمال کیا جاتاتھا ۔پولیس کا کہناہے کہ وہاں پر ایک خفیہ کیمرہ بھی لگایا گیا تھا ،گارڈ نے دعویٰ کیا کہ وہ اس فلیٹ کو مساج کے کاروبار کیلئے استعمال کرتے ہیں اور دعویٰ کیا کہ یہ دونوں خواتین اپنی مرضی سے یہ کاروبار کر رہی ہیں تاہم بعدازاں تحقیقات کے دوران گارڈ نے اعتراف جرم کر لیا ۔ ۔جاری ہے ۔


زبردستی جسم فروشی کے کاروبار میں دھکیلی گئی لڑکیوں میں سے ایک نے بتایا کہ جب ہم ایئرپورٹ پر پہنچیں تو اس وقت چار آدمی آئے اور انہوں نے زبردستی ہمارے بیگز چھین لیے اور ہمیں دھمکایہ کہ چلانا مت ،ہماری اس وقت حیرانگی کی انتہا نہ رہی اور کہ جب وہ ہمیں ایک مساج سینٹر پر لے آئے ،اتنی دیر میں ایک شخص آیا اور ہمیں لائن میں کھڑا کر دیاگیا پھر ایک شخص آیا اور اس نے میری دوست کو منتخب کیا لیکن اس نے اس مرد کے ساتھ جانے سے انکار کر دیا اور رونا شروع کر دیا ۔دوسری لڑکی کا کہناتھا کہ اس نے اپنے گھراپنے بھائی کو پیغام بھیجا تھا جس کے بعد اس نے قونصل خانے سے مدد طلب کی ۔

کیٹاگری میں : news

اپنا تبصرہ بھیجیں