.وہ شہر جو خدا کے عذاب کے باعث تباہ ہوگیا لیکن اب اس کے کھنڈرات سے سائنسدانوں کو ایک شخص کی لاش ایسی حالت میں مل گئی کہ دنیا کانوں کو ہاتھ لگانے پر مجبور ہوگئی

لگ بھگ 79عیسوی میں اٹلی کا شہر ’پومپئی‘ آتش فشاں پھٹنے سے لاوے اور راکھ میں غرق ہو گیا تھا۔ جب لاوے کی کئی کئی میٹر بلند لہریں آئیں تو پومپئی کا ہر باسی جہاں تھا۔جاری ہے۔

وہیں اس کی موت واقع ہو گئی۔ آج بھی ان لوگوں کی اسی پوزیشن میں لاشیں برآمد ہو رہی ہیں ۔ گزشتہ چند دنوں سے ان میں ایک مرد کی لاش کی تصویر سوشل میڈیا پر بہت گردش کر رہی ہے۔ تصویر میں اس شخص کی شرمناک پوزیشن دیکھ کر اندازہ ہوتا ہے کہ ان پر آتش فشاں کے ابلتے لاوے کا عذاب کیوں نازل کیا گیا تھا۔برطانوی اخبار دی میٹرو کی رپورٹ کے مطابق اس شخص کی پوزیشن دیکھ کر لگتا ہے کہ یہ اپنی زندگی کے ان آخری لمحات میں ’خودلذتی‘میں مصروف تھا۔ سوشل میڈیا صارفین اس تصویر پر بھانت بھانت کے کمنٹس دے رہے ہیں۔۔جاری ہے۔

ٹوئٹر پر ایک صارف نے تصویر کے ساتھ لکھا ہے کہ ”اس شخص کو جو کام پسند تھا، اپنے آخری وقت میں یہ وہی کر رہا تھا۔“ ایک اور صارف نے لکھا ہے کہ ”یہ شخص آخری بار خود لذتی سے تسکین حاصل کر رہا تھا یا اس کی یہ پوزیشن قدرت کے غیض و غضب کے خلاف بے باک مزاحمت کے نتیجے میں بنی؟“

کیٹاگری میں : news