رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے عورت کو کس مرد کے ساتھ ایک رات کی ہمبستری کرنے والے مرد کو کرائے کا سانڈکہا

“کرائے کا سانڈ” پر وضاحت تین طلاق، حلالہ وغیرہ کے سلسلے میں بعض اہل قلم اپنی انشا پردازی کی پوری مہارت بلکہ کاریگری کا کچھ ایسا استعمال کرتے ہیں کہ بظاہر تائید کرتے ہوئے بھی بین السطور میں تردید نظر آتی ہے.
ایسے موقع پرعربی کا مقولہ ..کلمتہ حق یرید بہ الباطل..یاد آجاتا ہے.۔جاری ہے۔


طلاق وحلالہ کے سلسلے میں رضی الاسلام ندوی کی تحریر سے بھی کچھ ایسی ہی کاریگری جھلکتی ہے.آج کل باقاعدہ سروے ہوچکا پے مسلمانوں میں طلاق کی شرح دیگر اقوام سے بہت کم ہے..رضی الاسلام صاحب ذرا گرد وپیش نظر ڈال کر بتائیں کہ ان طلاقوں میں جس طرح کے حلالہ کا ذکر کیا جاتا ہے اس کی شرح کتنی ہے.؟میں پورے یقین کے ساتھ کہتا ہوں کہ ایک ہزار شادیوں میں اگر ایک طلاق ہوتی ہے تو ایک ہزار طلاق میں بمشکل ایک حلالہ مذموم حلالہ ہوتا ہوگا.اس طرح تقریبا دس لاکھ شادیوں میں ایک کا اوسط پڑتا ہے….۔جاری ہے۔


اس کے باوجود تمام دشمنان اسلام اور کچھ ہمارے نادان یا جدیدیت سے مرعوب افراد ایسا ظاہر کرتے ہیں کہ اس وقت مسلمانوں ہی کا نہیں بلکہ پورے عالم کا سلگتا ہوا مسئلہ اگر کوئی ہے تو وہ تین طلاق اور حلالہ ہے…..

مزید بہترین آرٹیکل پڑھنے کے لئے نیچے سکرول کریں ۔↓↓↓۔