امام مسجد کی بہن سے ایسی شرمناک ترین حرکت کہ پورے علاقے میں ہنگامہ برپاہوگیا کوئی تصوربھی نہ کرسکتا تھا کہ

واحی گاﺅں 273 ای بی کے امام مسجد حافظ تقی کے گھر رات قریب گیارہ بجے علاقہ میں دہشت کی علامت اوباش رانا ساجد اپنے ساتھیوں رانا الیاس، رانا عباس، کاشف عرف نکا ہانس اور دو نامعلوم اشخاص کے ہمراہ دیواریں پھلانگ کر داخل ہوگیا تھا۔۔۔جاری ہے ۔

اور گھر والوں کے سامنے ہی حافظ تقی کی 12 سالہ ذہنی مریضہ حفیظہ بی بی کو صبح پانچ بجے تک اپنی ہوس کا نشانہ بناتا رہا تھا ۔متاثرہ بچی حفیظہ بی بی کی والدہ رضیہ بی بی اور بہنوئی جامعہ مسجد فیضان مصطفی کے امام حافظ تقی حیدر نے بتایا کہ ملزمان رانا ساجد، رانا الیاس، رانا عباس اور کاشف عرف نکا ہانس انتہائی خوفناک اور ظالم بااثر ہیں جن کے خوف سے علاقہ کے تمام لوگ خوفزدہ ہیں اور مظلوم خاندان کا ساتھ دینے کو تیار نہ ہیں۔۔۔۔جاری ہے ۔

روزنامہ خبریں کے مطابق دو روز قبل نواحی گاﺅں 273 ای بی کے امام مسجد حافظ تقی کے گھر رات قریب گیارہ بجے علاقہ میں دہشت کی علامت اوباش رانا ساجد اپنے ساتھیوں رانا الیاس، رانا عباس، کاشف عرف نکا ہانس اور دو نامعلوم اشخاص کے ہمراہ دیواریں پھلانگ کر داخل ہوگیا تھا اور گھر والوں کے سامنے ہی حافظ تقی کی 12 سالہ ذہنی مریضہ حفیظہ بی بی کو صبح پانچ بجے تک اپنی ہوس کا نشانہ بناتا رہا تھا جبکہ اس کے ساتھی اہل خانہ پر اسلحہ تان کر کھڑے رہے اور شدید ہوائی فائرنگ کرتے رہے۔ یہ بات قابل ذکر ہے کہ اتنے بڑے گاﺅں کے دونوں نمبردار بھی مبینہ طور پر ملزمان کے خالف کسی قسم کی گواہی دینے خوف سے غائب تھے۔۔۔۔جاری ہے ۔

ایک نمبردار محمد اشرف جٹ کے ڈیرے پر ان کے بیٹے محمد اکرم نے وقوعہ کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ملزم رانا ساجد قتل اور ڈکیتی کے مقدمات میں ملوث رہا ہے، چند ماہ قبل رہا ہوکر آیا ہے البتہ اس کے دیگر دونوں بھائی شریف لوگ ہیں۔ نمبردار کے بیٹے نے کہا ہم نے یہاں رہنا ہے ہم کسی قسم کی کوئی گواہی نہ دیں گے۔

مزید بہترین آرٹیکل پڑھنے کے لئے نیچے سکرول کریں ۔↓↓↓۔