میری گردن پر کس کرتے ہوئے اس نے میری کانوں کی بالیوں کو ہاتھ لگایا

السلام علیکم دوستو! ایک اور پر لطف کہانی کے ساتھ آپکی خدمت میں حاضر ہوں، کہانی کے آخر میں آپ سے ایک سوال پوچھا جائے گا کہانی آخرتک ضرور پڑھیں۔ دوستوں امتحان کی تیاری کے سلسلے میں جب میں اپنے کلاس فیلو( جو کہ ایک لڑکا تھا) کے ساتھ اپنے سہیلی کے گھر میں اکیلی تھی، لڑکے نے کہا میں آپ کو امتحان کی تیاری کرواوں گی۔۔۔جاری ہے ۔

لیکن میری ایک شرط ہے اس کو پورا کروگی؟ میں نے پوچھا کیا شرط؟ وہ بولی سوچ لو مان لوگی میری شرط؟ میں نے سوچا اگر نا کروں گی تو امتحان کی تیار ی میں مسلہ ہوگی اس لیے ہاں کرنے کا ناٹک کر لیا! تو اس نے کہا کل بتاوں گا اپنا شرط! میں بولی چلو ٹھیک ہے! جب اگلے دن سکول گئی وہ لڑکا بہت خوش دکھائی دے رہا تھا، میں جان بوجھ کر اس کو کلاس میں نو لفٹ کر رہی تھی لیکن وہ بار بار میرے ساتھ بات کرنے کی کوشش میں تھی قریب آکر بولی آج تیار ہونا شرط بتاوں گی آپ کو آپ کی سہیلی کے گھر میں سیکنڈٹاٗم میں نے کہا چلو ٹھیک سیکنڈ ٹاٗم جب تیاری کا ٹائم آیا میں آج جان بوجھ کو خوب بن سنور کے گئی میک اب لپ اسٹک اور ناخن پالش لگا کے گئی جب سپیلی کے گھر میں پہنچی تو سہیلی بھی آج مجھے دیکھ کر حیران ہوگئی اور بولی یہ امتحان کی تیاری ہے یا ایسا نہیں کہ سچ مچ تیاری کرکرکے اس کے عشق میں گرفتار ہوچکی یو میں بولی ایسی کوئی چکر نہیں کہانی لمبی ہے بعد میں سمجھاوں گی فی الحال ہمیں امتحان کی تیاری کرنے دو اس نے زیادہ اسرار نہیں کیا کیونکہ وہ خود بڑی احسان کررہی تھی مجھ پر جہاں میں اس لڑکے کے ساتھ امتحان کی تیاری میں مصروف تھی۔۔۔جاری ہے ۔

اور یہ گھر میری سہیلی کی تھی جس میں یہ کمرہ اس نے میرے لیے مکصوض کی تھی مقررہ وقت پرلڑکا بھی آگیا کمرے میں کتابوں کے ساتھ میں اس کے انتظار میں تھی اس کے ساتھ ساتھ میک اپ اور پرفیوم کے ساتھ پری لگ رہی تھی لڑکے نے جب اس حالت میں مجھے دیکھا تو اسے یقین ہوگیا کہ آج اس کا شرط میں پوری کروں گی اور وہ اس گمان میں تھا کہ میں اس کے عشق میں گرفتار ہوچکی ہوں میرے قتیب بیٹھ کر وہ بولا کیا حسین منظر ہے میں نے مسکراہٹ کے ساتھ اسے آنکھوں کے ساتھ سٹائل
میں اشارہ کیا اس نے آتے ہی پہلے یہی بات کی کہ شرط بتادوں میں نے بھی فوری ہاں کہہ دی کیونکہ میں نے جان بوجھ کر اپنی یہ پوزیشن بنالی تھی وہ بولا آپ آج پہلے سے زیادہ حیسن لگی رہی ہو شرط کو چھوڑو میں چاہتا ہوں آُ سے ابھی بغل گیر ہوجائوں میں نے کوئی جواب نہیں دیا اس نے کہا دیکھو آج میں اپنے آُ کو روک نہیں پائوں گا امتحان کی تیاری آج نہیں ہوسکتی اس میک اپ اور حسین لمحوں میں کیسے میں امتحان کی بات کروں میرے جذبات آج مجھے مجبور کرہے ہیں یہ کہتے ہوئے اس لڑکے نے مجھے اپنی بانہوں میں لیا اور میرے کالوں پر کس کرنا شروع کیا کس کے دوران وہ میرے ہاتھوں سے کھیل رہا تھا اور ککہ رہا تھا۔۔۔جاری ہے ۔

آپکے ہاتھ نیل پالش کے ساتھ کتنا خوبصورت لگ رہے ہیں میری گردن پر کس کرے ہوئے اس نے میری کانوں کی بالیوں کو ہاتھ لگایا اور کہا میں آپ پر فدا ہوجائوں گا آج آپ کئ کان کتنے خوبصورت ہیں میری ہونٹوں کو چومتے ہوئے اس نے کہا سرخ لپ اسٹک میں کتنی خوبصورت لگ رہی ہیں آپکے ہونٹ میرے بدن کو سنگھتے ہوئے اس کہا کیا خوشبو ہے میری زندگی میں یہ میری فرسٹ تجبربہ تھا کسی لڑکے کے ساتھ وہ بھی اکیلے میں اس کلیے میں کافی نروس تھی جو کچھ کر رہا تھا وہ لڑکا کر رہا تھا میں اس کے ہاتھوں میں بت بنی بیٹھی تھی وہ کچھ ادھر چومتا تو کبھی ادھر کچھ منٹ گزرنے کے بعد اس نے میری قمیص اوپر کرنے کی کوشش کی یہ میرے لیے بالکل ایک نئی چیز تھی کس کو کسی حد تک میں نے نظر انداز کر رہی تھی لیکن جب قمیص اوپر کرنے کا ٹائم آیا تو میں نے اس کا ہاتھ روکا اس نے مزاحمت کی کوشش کی اس رومانس کے دوران پہلی دفعہ میں نے خاموشی تھوڑدی اور کہا نہیں اس طرف جانا مت اس نے میری ہونٹوں پہ ایک اور زرد دار کس کی اور کہا آج مجھے روکنا مت اورشرط بھی آپ کو پوری کرنی ہے میں بولی یہ چھوڑ و شرط بتائو اس نے کہا یہ تو ہے میری شرط مجھے اپنی یہ کہتے ہوئی وہ رک گیا میں بولی بتاونا کیا تو اس نے کہا شرط یہ ہے۔۔۔جاری ہے ۔


کہ مین آپ کے ساتھ اس وقت اپنی جمسانی پیاس بجھانا چاہتا ہوں آج آپ ہری لگ رہی ہو باتو پیاس بجھانے دوگی میں نے کہا ایک شرط ہے وہ بولا کیا میں نے کہا امتحان کے بعد اس باتے میں بات کریں گے ابھی نہیں لیکن اس نے جھٹکے سے مجھے دبایا اور کہا نہیں پلیز بھی میں نے ایک دفعہ پھر مزاحمت کی اور کہا ابھی بالکل نہیں وہ اسرار کرتا تہا اور ساتھ ساتھ واپس میرے قریب آکر مجھے دبوچنے کی کوشش کررہا تھا جب اس نے زیادہ مجھے مجبور کیا تو میں اُٹھ بیٹھی اور اپنی سہیلی کو بلائی اور سہیلی سے اجازت لی کہا کل سکول میں میلں گے راستے میں یہ سوال میری ذہین میں بار بار آریا تھا کہ کیا اس کو روک کر میں نے اچھا کیا امتحان کی تیاری کے لیے کیا مجھے یہ حد بھی پار کرنی چاہیے تھی اب کون میری مدد کرے گا تیاری میں کیا اس کو واپس بلا کے راضی کروں کیا واپس اس کی شرط مان لوں یہ وہ سوالات تھے جو گھر تک بار بار میرے ذہین میں آرہے تھے دوستوں آپ کیا کہتے ہو اس گناہ سے اسے روک کر میں نے اچھا کام کیا یا مصیبت کے وقت مجھے یہ کر گزرنا چاہیے تھا

مزید بہترین آرٹیکل پڑھنے کے لئے نیچے سکرول کریں ۔↓↓↓۔

کیٹاگری میں : Kahani