بھٹو جونیئر فاطمہ اور آزادے حسین کے بعد بلاول اور حنا کا سکیس سکینڈل منظر عام پر

وزیر خارجہ حنا ربانی کھر اور بلاول زرداری کا اسکینڈل کس طرح پکڑا گیا؟ نئے انکشافاتپاکستانی خاتون وزیر خارجہ اور بلاولزرداریبھاگ کرجلد ہی سوئیٹزرلینڈ میں شادی کرنے والے ہیں۔ یورپ کی ایک بہت ہی اعلی خفیہ ادارے نے اپنی مصدقہ رپورٹ میں پاکستان کی کم عمر اور حسینہ وزیر خارجہ حنا ربانی کھر اور پاکستانی صدر زرداری کے واحد اور نوجوان بیٹے بلاول کے درمیان پلنے والے۔جاری ہے۔

رومانس کا تفصیلی اور ویڈیوز کے ساتھ ذکر کیا ہے۔ بلاول بھٹو پاکستان کے سب سے بڑی پارٹی پی پی پی کے صدر بھی ہیں اور مقتول بے نظیر بھٹو کے واحد بیٹے اور سوئیٹزرلینڈ میں چھپائی گئی ان کی اربوں ڈالر کی خفیہ دولت کے قانونی وارث بھی ہیں۔ بلاول زرداری نے جب سے اپنے والد اور پاکستانی صدر زرداری کو یہ فیصلہ سنایا ہے کہ وہ حنا ربانی کھر سے شادی کرنےجا رہے ہین تب سے وہ شاک میں ہیں اور باپ بیٹے کے درمیان سرد جنگ عروج پر پہنچ چکی ہے۔ عین اسی دوران حنا ربانی کھر نے اپنےارب پتی شوہر فیروز گلزار کو بتا دیا ہے کہ وہ بلاول سے عشق کرتی ہین اور ان سے شادی کرنا چاہ رہی ہیں اس لئے وہ انہیں طلاق دے دیں۔ حنا ربانی کھر کی اس شوہر سے دو بیٹیاں ہیں جن کے نام انایا۔جاری ہے۔

اور دینا ہیں۔ حنا ربانی کھر 19نومبر 1977 کو پیدا ہوئی تھیں اور ان کے والد مشہور اور متنازعہ سیاستدان غلام مصطفی کھر ہیں۔ یہ بھی اپنی بیویوں کےلئے مشہور رہے ہیں اور ان کی رومانوی داستانیں دلچسپی سے سنائی جاتی ہیں۔ پاکستا ن کی انتہائی بڑی زمیندار اور وڈیرہ فیملی سے تعلق رکھنے والی حنا ربانی کھر کا خاندان گائوں کھر غربی، تحصیل کوٹ ادو مظفر گڑھ پنجاب سے تعلق رکھتا ہے اور غلام ربان کھر پنجاب کے گورنر رہ چکے ہیں۔ اس خاندان کے کئی باغات اور بہت بڑی زمینیں ہیں جب کہ یہ ایک اسٹیل مل کا بھی مالک ہے۔حنا ربانی کھر نے پہلے پاکستان میں لاہور کی لمس یونیورسٹی سے 1995 میں تعلیم حاصل کی اور پھر وہ لندن چلی گئں اور وہاں 1999 تک تعلیم حاصل کرتی رہیں، اس کے بعد امریکہ چلی گئیں یونیورسٹی آف میس چیسٹیس سے ماسٹر کی ڈگری ہاسپیٹل اور ٹورازم منیجمنٹ میں حاصل کی اور یہ تھا سن 2002۔اس کے بعد 2004 میں شوکت عزیز نے ان کو پاکستانی سیاست میں متعارف کرایا۔ کہا جاتا ہے کہ شوکت عزیز عورتوں کے رسیا تھے اور ہر عورت پر ڈورے ڈالتے تھے۔ اس سے قبل 2002 میں حنا ربانی کھر کے خاندان کے تمام افراد انتخابات کے لئے نااہل ہوچکے تھے۔جاری ہے۔

کیونکہ کسی کےپاس بھی بی اے کی ڈگری نہ تھی اس لئے انہوں نے اپنی بیٹی حنا ربانی کھر کو آگے کردیا جو آسانی سے جیت کر قومی اسمبلی میں آگئیں جہاں سے 2004 میں رنگین مزاج وزیر اعظم شوکت عزیز نے انہیں اپنا وزیر خزانہ بنا لیا۔ اس وقت حنا ربانی کھر پی پی کی ممبر نہیں بلکہ ق لیگ کی ممبر تھیں اور ق لیگ ہی برسر اقتدار تھی۔ 2005 تک حنا ربانی کھر شوکت عزیز کی سرپرستی میں کام کرتی رہیں اور ان کی مددگار کاکام کرتی تھیں۔ خاتون اور حسین ہونے کی وجہ سے انہیں بہت جلد کامیابی ملتی تھی۔ مثلا 2005 کے زلزلے میں انہیں امداد مانگنے کے لئے استعمال کرنے کا فیصلہ کیا گیا اور انہوں نے کامیابی سے یہ کر کے دکھایا۔2008 میں جب انتخابات ہونے جا رہے تھے تو حنا ربانی کھر نے ق لیگ چھوڑ کر پی پی میں شمولیت اختیار کرلی اور پھر وہ یوسف رضاگیلانی کی پی پی حکومت میں بھی وزیر بن گئیں۔۔جاری ہے۔


یورپی خفیہ ادارے کا کہنا ہے کہ پاکستانی صدر آصف علی زرداری اپنے بیٹے بلاول زرداری کو یہ سمجھانے کی کوشش کررہے ہیں کہ تعلقات رکھنا ٹھیک ہے مگر ایک شادی شدہ اور دو بچوں کی ماں سے شادی کرنا درست نہیں بلکہ پاگل پن ہے۔ صدر زرداری کا کہنا ہے کہ ایسا کرنے سے نا صرف بلاول کا سیاسی کیئریر ختم ہو کر رہ جائے گا بلکہ پی پی کی قیادت بھی زرداری خاندان سے نکل کر کھر خاندان کے پاس جا سکتی ہے۔ خفیہ ادارے کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ یہ پاکستانی صدر ہی ہیں کہ جن کی ایما پر اب حنا ربانی کھر اور ان کے شوہر کی ٹیکسٹائل مل کے بجلی کے بھاری بل معاف کرانے کا اسکینڈل خفیہ اداروں کی طرف سے پھیلایا جا رہا ہے تاکہ انہیں سبق سکھایا جا سکے۔ یہ بھی کہا جا رہا ہے کہ حنا ربانی کھر، ان کے شوہر اور ان کا خاندان این آر او سے فائدہ اٹھانے والوں میں شامل ہے اور بڑے گھپلوں میں ملوث ہے جنہیں اب کھولنے کی بات کی جا رہی ہے۔ اس مرحلے پر اپنے والد کا جارحانہ رویہ دیکھ کر بلاول کو اندازہ ہو گیا ہے۔جاری ہے۔

کہ وہ اس کی وجہ سے حنا ربانی کھر اور ان کے خاندان کے لئے مشکلات پیدا کررہے ہیں، اس نے اپنے والد صدر زرداری کو دھمکی دی ہے کہ اگر انہوں نے حنا ربانی کھر کو ستانا بند نہ کیا تو وہ پی پی کی صدارت سے استعفی دے کر ملک چھوڑ جائے گا۔ بلاول نے یہ بھی کہا ہے کہ وہ حنا ربانی کھر سےشادی کر کے سوئیٹزر لینڈمین مقیم ہو گا جہاں حنا ربانی کھر کی دونوں بیٹیاں بھی ان کے ہمراہ ہوں گے۔ بعد میں بلاول نے اپنے والد صدر زرداری کوبتایا کہ حنا ربانی کھر اس بات پر راضی ہوگئی ہیں کہ وہ اپنی بیٹیاں،طلاق کے بعد اپنے شوہر کےپاس ہی چھوڑ جائین گی۔ واضح رہے کہ یہ کہا جاتا ہے۔جاری ہے۔

کہ بے نظیر بھٹو نے اپنی خفیہ دولت سوئیٹزر لینڈ میں چھپا رکھی ہے جو کہ کئی ارب ڈالر بنتی ہے اور اس دولت کا قانونی وارث بلاول ہی ہے۔ خفیہ ادارے کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ حنا ربانی کھر اور بلاول کے درمیاں تعلقات کا انکشاف اس وقت ہوا جب ایوان صدر اسلام آباد میں صدرزرداری نے اپنی آنکھوں سے دونوں کو تنہائی میں دیکھ لیا۔ حناربانی ایوان صدر آئی تھیں جب کہ بلاول وہیں پر مقیم ہین۔ اس کےبعد صدر زرداری نے دونوں کےموبائل کا ریکارڈ نکلوایاتو ہوشربا انکشافات منتظر تھے۔ ایک اور انکشاف حنا ربانی کھر کی طرف سے بلاول کو بھیجا گیا ایک کارڈ تھا جس ان کے ہاتھ سے لکھا تھا:۔جاری ہے۔


ہمارے تعلقات کی بنیاد ہمارے اندر ہی ہے اور بہت جلد ہم ایک دوسرے کے ہوجائین گے۔اس سب نے صدر زرداری کو ہلاکر رکھ دیا ہے مگر وہ کچھ کر نہیں پارہے اور سرد جنگ عروج پر ہے۔ یاد رہے کہ بلاول زرداری عمرمیں حنا ربانی کھر سے 11 سال چھوٹے ہیں۔ کچھ عرصہ قبل بھی بلاول زرداری کا کچھلڑکیوں کے ساتھ ایک جنسی اسکینڈل سامنے آیا تھا۔

مزید بہترین آرٹیکل پڑھنے کے لئے نیچے سکرول  کریں۔ ↓↓↓۔

کیٹاگری میں : news