لاہور کا مہنگا ترین علاقہ جہاں پر ہر دوسرے گھر میں فحاشی کا اڈہ بن چکا ہے پولیس بھی بہتی گنگا میں ہاتھ دھونے لگی

لاہور کے مہنگے ترین کمرشل زون تھانہ غالب مارکیٹ کی حدود میں فراڈ اورکرپشن کے واقعات صوبائی دار الحکومت کے تمام علاقوں کی نسبت نہ صرف زیادہ ہیں بلکہ مبینہ چوری کی وارداتیں بھی خاصی تعداد میں سامنے آ رہی ہیں،اہل علاقہ اس سے پریشان تو تھے لیکن اس تھانہ کی حدود میں انتہائی حیران کن طور پر جو جرم سب سے زیادہ سرزر ہونے لگا ہے۔جاری ہے۔

اس کی سزا صرف سنگساری ہے۔اس کے علاوہ تھانہ کی حدود میں شراب کی فروخت نے بھی دیگر علاقوں کو پیچھے چھوڑ دیا ہے ۔’’پاکستان‘‘ کی جانب سے کئے جانے والے سروے میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ منشیات اورشراب فروشی جتنی عام ہے تھانہ کی حدود میں سڑکوں پر ہونے والے واقعات سے اخبارات بھرے نظر آتے ہیں۔ذرائع نے بتایا ہے کہ تھا نہ غالب مارکیٹ کی حدود میں 80ایسے گیسٹ ہاؤسز موجود ہیں جن کے مالکان کی مبینہ ملی بھگت سے بھاری کرایوں پر مساج روم دستیاب ہیں اور مقامی ایس ایچ او کی جانب سے انہیں بھرپور تحفظ فراہم کیا جاتا ہے ۔ذرائع کے مطابق مقامی تھانہ کے ایس ایچ او کے کار خاص ہراہم پوائنٹ پر موجود ہوتے ہیں جو کسی بھی قسم کی بد نظمی پیدا ہونے سے قبل ہی صورتحال کو کنٹرول کرلیتے ہیں۔جاری ہے۔

اور اس کا بھاری معاوضہ وصول کیا جاتا ہے ۔گیسٹ ہاؤسز میں انتہائی منظم طریقہ سے منشیات فروشی اور قحبہ خانوں کا یہ سلسلہ زور پکڑتا جا رہا ہے جسے روکنے میں تمام اعلیٰ پولیس حکام بھی بے بس دکھائی دیتے ہیں۔جرائم پیشہ عناصر نے تھانہ غالب مارکیٹ کی حدود میں اپنی چودھراہٹ قائم کر رکھی ہے ۔بظاہر قانون موجود ہے لیکن پس پردہ ہر غیر قانونی کام اس علاقے میں ہو رہا ہے۔ ذرائع کے مطابق فردوس مارکیٹ کی بیک سائیڈ پر چوہدری محمد رفیق اور اسد مسیح اور گوپال نگر گلی نمبر 7کا ظفر عرف ظفری وغیر ہ ہیں جو بھاری مقدار میں اعلیٰ کوالٹی کی چرس ،افیون اور شراب فروخت کرتے ہیں ۔80 گیٹ ہا ؤسزکوسب انسپکٹر زبیر بھٹی کی سرپرستی حا صل ہے ۔ کا ر خا ص محرر شفیق ، اور چو کی انچا ر ج محمد انو ر لا کھو ں رو پے منتھلی وصول کرتے ہیں۔۔جاری ہے۔

قحبہ خانہ چلانے والوں میں کوٹھی نمبر 59/A-IIگیسٹ ہاؤس،صدیق ٹریڈ سنٹر کے قریب کھوٹی خانہ،سیٹھ خالد گیسٹ ہاؤس نزد فردوس مارکیٹ ،ایم ایم عالم روڈ پر ایلیٹ ہوٹل ،گلبرگIIکا سٹی کا لج ،8/Bلگژری پیلس اورکیفے چوکوک 1گیسٹ ہاؤس،ظفر علی روڈکا لارڈزلان گیسٹ ہاؤس اور رائل اینجلس گیسٹ ہاؤ س،کرشن گارڈن کا محمد منیر ،ڈیسنٹ گیسٹ ہاؤس مالک عبدالرزاق ،گرومانگنٹ روڈ کا خالد ،گلبرگ III 61/B-1کا ہوٹل گلبرگ شامل ہے جہاں ملکی و غیر ملکی لڑکیاں جسم فروشی کرتی ہیں۔ گلبرگ13-k III پر واقع گلبرگ پیلس ہوٹل ،ایل بلاک کا زینسیا پیلس مالک ملک منظور اعوان اور ہوٹل کمفرٹ ان وغیرہ کے نام قابل ذکر ہیں جہاں پر زور شور سے فحاشی کے اڈے چل رہے ہیں۔ تھا۔جاری ہے۔

نہ غا لب ما ر کیٹ کے سروے کے دوران مقامی رہائشی امداد،حسن،ذاکر،رشید خان،علی باکر،نذاکت بھٹی سمیت دیگر افراد نے نمائندہ “پا کستان “سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ یہاں پر چرس،شراب،افیون،گردہ اور شراب بیچنے والی گلیوں اور کوچوں میں سرعام نئی نسل سمیت دیگر افراد کو نشے کی لعنت بیچنے میں مصروف ہیں تاہم اس کا مقامی پولیس کا بھی بخوبی علم ہے ۔ اس حوالے سے ایس ایچ او زبیر بھٹی کا کہنا ہے کہ گیسٹ ہا وسز موجود ضرور ہیں اورمتعد د با ر وہاں ریٹ کی گئی ہے۔جاری ہے۔

اور در جنو ں افرا د کو حرا ست میں لیا گیا ہے جبکہ منشیا ت فروشوں کے خلا ف بھی کا رروا ئی کی جا ر ہی ہے ۔

مزید بہترین آرٹیکل پڑھنے کے لئے نیچے سکرول  کریں۔ ↓↓↓۔

کیٹاگری میں : news