…ختم نبوتؐ کامعاملہ،زاہد حامد نے وہ اعلان کردیا جس کا پورے پاکستان کو بے صبری سے انتظار تھا

وفاقی وزیر قانون زاہد حامد نے ایک مرتبہ پھر ختم نبوتؐ کے قانون پر اپنا موقف واضح کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان کا کسی بھی احمدی، لاہوری یا قادیانی گروپ سے کوئی تعلق نہیں ہے۔۔جاری ہے ۔

اور وہ ختم نبوت کیلئے اپنی جان بھی قربان کر سکتے ہیں۔انگریزی روزنامے ’’دی نیشن“ کے مطابق وفاقی وزیر قانون زاہد حامد نے اپنے بیان میں کہا کہ وہ ختم نبوتؐ پر غیر مشروط ایمان رکھتے ہیں۔ ان کا کہنا تھا ” میں اور میرا خانداننبی کریم حضرت محمد ﷺ کیلئے اپنی جانیں بھی قربان کر سکتے ہیں۔“۔ انہوں نے کہا ”آئین پاکستان کےمطابق احمدی غیر مسلم ہیں اور میں اس قانون کی مکمل حمایت کرتا ہوں۔۔۔جاری ہے ۔

“واضح رہے کہ اس سے پہلے ملک بھر میں فسادات پھوٹنے کے بعد وفاقی وزیر قانون زاہد حامد نے اپنے استعفے کی پیشکش کی ہے، تفصیلات کے مطابق بیس روز سے جاری تحریک لبیک کا سب سے بڑا مطالبہ ہی وفاقی وزیر قانون زاہد حامد کا استعفیٰ تھا مگر آپریشن سے قبل حکومت ٹس سے مس نہ ہوئی اور نہ ہی زاہد حامد نے استعفے کی پیشکش کی مگر اب انہوں نے استعفیٰ دینے کی پیش کش کر دی ہے، وزیر قانون زاہد حامد کا کہنا ہے کہ اگر ان کے استعفے سے حالات ٹھیک ہو سکتے ہیں تو وہ استعفیٰ دینے کیلئے تیار ہیں،۔۔جاری ہے ۔

زاہد حامد نے وزیراعظم کو بھی استعفیٰ پیش کرنے سے متعلق مطلع کر دیا ہے، زاہد حامد نے وزیراعظم سے درخواست کی ہے کہ حالات کی بہتری کیلئے انہیں استعفیٰ دینے کی اجازت دی جائے لیکن وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کی طرف سے ابھی تک کوئی حتمی فیصلہ نہیں کیاگیا ہے

مزید بہترین آرٹیکل پڑھنے کے لئے نیچے سکرول  کریں۔ ↓↓↓۔

کیٹاگری میں : news