بڑی گاڑی مسئلہ نہیں ہے مولانا آپ کی شخصیت سے کچھ لوگ جلتے ہیں

میں نے پانچ سال مولانا طارق جمیل صاحب کے مدرسہ عید گاہ تلمبہ خانیوال میں پڑھا ہے مولانا میرے استاد ہیں ان سے پڑھا ہے ان کے قدموں میں بیٹھے ہیں قریب سے دیکھا ہے

مولانا کو پیدل چلتے بھی دیکھا موٹر سائیکل پر بیٹھے بھی دیکھا بی ایم ڈبلیو، مرسڈیز کو بھی مولانا کے قدموں میں دیکھا مولانا کا آبائی گھر تلمبہ سے دو تین کلو میٹر آگے آڑی والا (حسین پور) میں ہے مولانا کےخاندان کاعلاقے کے بڑے زمینداروں میں شمار ہوتا ہےسینکڑوں کنال کی زرعی اراضی ہے، آم، کینو، امرود کے باغات ہیں مولانا کے دوسرے بھائی ڈاکٹر طاہر سہو صاحب کا پاکستان کے دل کے بڑے ڈاکٹروں میں شمار ہوتا ہے لاہور ڈاکٹر ہسپتال جوہر ٹاؤن میں ہوتے ہیں

مولانا خاندانی رئیس ہیں ایک بار تلمبہ جا کر اپنی آنکھوں سے دیکھ لیں مولانا کی ذاتی سرپرستی میں دو بڑے مدارس چلتے ہیں 1 جامعۃ الحسنین فیصل آباد 2 دارالعلوم عیدگاہ تلمبہ دونوں مدارس میں پاکستان کے دور دراز کے علاقوں کے سینکڑوں طلباء زیرِ تعلیم ہیں
اور کسی طالب علم سے فیس نہیں لی جاتیپاکستان کے اچھے مدارس میں شمار ہوتا ہے جہاں طلباء کی ہر ضرورت کا اچھے اندازمیں خیال رکھا جاتا ہے بہترین معیاری کھانے، رہنے کے لئے اچھی عمارتیں مولانا ان مدارس کا خرچہ خود برداشت کرتے ہیں یقین نہ آئے تو دونوں مدارس میں جاکر اپنی آنکھوں سے دیکھیں کوئی چندے کا سسٹم نہیں کسی سے سوال نہیں کیا جاتا مولانا نے کتنے ہی غریب خاندانوں کی غریب بچیوں کی شادیاں کروائی مولانا کتنے ہی غریب خاندانوں کے کفیل ہیں مدارس کے غریب طلباء کے ساتھ امداد کرتے ہیں

مولانا کہیں بھی بیان کرنے جاتے ہیں تو پہلی کوشش یہی ہوتی ہے کہ اپنا خرچہ کیا جائے ویسے تومولاناکے لئے لوگ لیموزین سے بڑھ کر مہنگی گاڑیاں لاتے ہیںافریقہ کے جنگلوں میں یہی مولانا پیدل سفر گدھاگاڑیوں بیل گاڑیو ں پر بھی سفر کرتے ہیں یورپ میں مولانا کے استقبال کے لیے لوگ لیموزین، بی ایم ڈبلیو، مرسڈیز لاتے ہیں جبوتی کے غریب ترین ملک میں ٹوٹی پھوٹی کشتیوں پر بھی سفر کرلیتے ہیں پاکستان کے دیہاتوں میں موٹر سائکلوں پر بھی سفر کر لیتے ہیں

کبھی جس کی زبان سے کسی کی برائی نہیں سنی کبھی کسی پر اعتراض نہیں کیا ہمیشہ امت کو جوڑنے کی بات کی معلوم نہیں صرف ظاہری تصویر دیکھ کر لوگ کیساگمان کر لیتے ہیں خدا کے بندو کل میدانِ حشر میں ان باتوں کا حساب بھی دینا ہے اللہ کے لئے نفرت چھوڑ دو اور آپس میں محبت کرو ہم سب ایک امت ہیں۔اللہ ہم سب کو ہدایتِ کاملہ عطاء فرمائے آمین ۔ حامد حسن سعدی کے قلم سے

مزید بہترین آرٹیکل پڑھنے کے لئے نیچے سکرول  کریں۔ ↓↓↓۔

کیٹاگری میں : news